میری سیاسی جدوجہد تحریر: ڈاکٹر رمیش کمار وانکوانی

73

 

گزشتہ ہفتے 7اپریل کا دن میری سیاسی جدوجہدمیں ایک اہم سنگ میل کی حیثیت رکھتا ہے جب پاکستان تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان اپنے قریبی ساتھیوں جہانگیر ترین، شبلی فراز وغیرہ کے ہمراہ میری رہائش گاہ آئے، میں نے اپنی پریس کانفرنس کا آغاز ہی ان الفاظ سے کیا کہ تحریک انصاف میں شمولیت سے میرا ماضی، حا ل اور مستقبل جڑا ہوا ہے۔ آج سے سولہ برس قبل جب میں نے سیاست کی پرخار وادیوں میں قدم رکھا تو میرے سامنے واحد ایجنڈا اپنی کمیونٹی کی خدمت کرنا تھا، میں سیاست کو عبادت سمجھتا ہوں اور جس طرح عبادت کرنے کیلئے عبادت گاہ ضروری ہے ، اسی طرح ایک جمہوری سوچ رکھنے کی وجہ سے مجھے ایک ایسی سیاسی جماعت کی تلاش تھی جسکی چھتری تلے میں ملک و قوم کی خدمت کرتارہوں۔ ایک وقت تھا کہ قائداعظم کا شمار انڈین کانگریس کے سرکردہ راہنماؤں میں ہوتا تھا، کانگریس کی متعصب پالیسیوں سے انہیں مجبور کردیا کہ وہ اپنی راہیں جدا کرکے آل انڈیا مسلم لیگ میں شمولیت اختیار کریں۔ مسلم لیگ اس زمانے میں نوابوں کی جماعت کہلاتی تھی لیکن جب قائداعظم مسلم لیگ کا حصہ بنے تو دیکھتے ہی دیکھتے مسلم لیگ کا پیغام برصغیر کے کونے کونے میں چھا گیا۔ قائداعظم کی زیرقیادت تحریک پاکستان کی حمایت کرنے والوں میں بے شمار غیرمسلم باشندے بھی شامل تھے،انہوں نے گیارہ اگست کی تقریرمیں صاف صاف کہہ دیا کہ پاکستان میں بسنے والے تمام شہری پاکستانی ہیں، نہ کوئی اقلیت اور نہ کوئی اکثریت۔ افسوس، قیام پاکستان کے فقط ایک برس بعد قائداعظم کی وفات نے ہمیں انکے وژن سے بہت دور کردیا۔ہم نے تو اپنے قومی پرچم کو بھی رنگوں کی بنیاد پر تقسیم کردیا کہ ہرا رنگ مسلمانوں اور سفید رنگ غیرمسلموں کی عکاسی کرتا ہے۔ میں جب سیاست میں آیا تو میرے سامنے قائداعظم کی مسلم لیگ کا تصور تھا۔میں میاں نواز شریف کی زیرقیادت مسلم لیگ (ن)کے پلیٹ فارم سے 2013ء میں ممبر قومی اسمبلی منتخب ہوا۔ اس نشست کو حاصل کرنے میں میری طویل سیاسی اور سماجی جدوجہدکا جذبہ کارفرما تھا،میں نے 2005ء میں بطور سرپرست اعلیٰ پاکستان ہندوکونسل کی بنیادیں رکھیں جو سیاسی وابستگی سے بالاتر ہوکر سماجی خدمت کرنے کا مثبت ریکارڈ رکھتی ہے۔ جب بھی کچھ شدت پسند عناصر کی طرف سے محب وطن غیرمسلم اقلیتوں پر پاک سرزمین تنگ کرنے کی کوشش کی جاتی ہے تو میرا موقف ہمیشہ پاکستان سے محبت، قائداعظم کے وژن اور حب الوطنی سے بھرپور ہوتا ہے، میری پارلیمانی جدوجہد، مختلف قومی و عالمی تقاریب میں نمائندگی اور میڈیا پر موجودگی ہمیشہ پاکستان کا مثبت امیج اجاگر کرتی ہے۔ میں (ن )لیگ سے وابستہ ضرور رہا لیکن اصولوں پر کبھی سمجھوتہ نہیں کیا۔مسلم لیگ (ن)کی طرف سے انتخابات سے پہلے کے وعدوں کو نظرانداز کرنے پر مجھے اگلے برس ہی غیر مسلم اقلیتوں کے حقوق کے تحفظ کیلئے سپریم کورٹ کے در پر جانا پڑگیا، مسلسل سماعتوں کے بعد سپریم کورٹ نے 19جون 2014ء کو تاریخی فیصلہ سنایا تو اسکا نفاذ عملی طور پر نہیں ہوسکا۔ عدالت کے واضح احکامات کے باوجود مذہبی مقدس مقامات کی حفاظت کیلئے نہ تو ٹاسک فورس بن سکی اور نہ ہی زہریلا مواد نصاب تعلیم سے خارج کیا جاسکا۔ حالیہ کچھ دنوں میں ٹی وی ٹاک شوزمیں اکثر پوچھا جاتا کہ ڈاکٹر صاحب، آپ پارٹی تو نہیں بدل رہے؟ اسکی وجہ یہی تھی کہ میں اپنا موقف دلائل کے ساتھ پیش کرتا تھا، گالم گلوچ سے اجتناب کرتے ہوئے اخلاق کے دائرے میں رہتا تھا، میں ہمیشہ کہتا تھا کہ سیاسی لیڈران عوام کے رول ماڈل ہوتے ہیں اور انہیں اپنے الفاظ کا چناؤ درست کرنا چاہیے، میں عدلیہ کے احترام اور قومی اداروں کے استحکام کی بات کرتا تھا۔ میں نے (ن)لیگ کے اجلاسوں میں بھی برملا کہا کہ فیصلہ چاہے جو بھی آئے، ہمیں عدالت کا فیصلہ تسلیم کرنا چاہیے۔ مسلم لیگ (ن) میں کچھ عناصر اداروں کے ٹکراؤ میں یقین رکھتے تھے لیکن میں یہی سمجھتا رہا کہ یہ سب سیاسی بیانات ہیں اور حالات بہتر ہوجائیں گے۔ میں اپنے ٹی وی ٹاک شوز میں کہتا رہا کہ پاناما معاملہ سابق وزیر اعظم اور انکے بچوں کے حوالے سے ایک عالمی ایشو ہے اور میاں صاحب کو قانونی طریقے سے اپنا دفاع کرنا چاہیے۔ یہی وجہ ہے کہ میں کبھی عدالت پیشی کے موقع پر انکے ہمراہ نہیں پایا گیا۔ دوسری طرف (ن)لیگ کا بیانیہ روز بروز عدلیہ اور قومی اداروں کے خلاف نفرت انگیز ہوتا چلا گیا۔وزیراطلاعات مریم اورنگزیب نے جب پاناما فیصلے پر اپنے تبصرے میں ہندوؤں اورغیرمسلموں کے بارے میں نامناسب کلمات ادا کیے تو میں نے فوری طور پر ان سے رابطہ کرکے اپنا احتجاج ریکارڈ کرایا، اس حوالے سے میرا سخت ردعمل روزنامہ جنگ میں 16دسمبر 2017ء کو پہلے صفحے پر شائع ہوا۔ کرپشن ایک سماجی ناسور ہے، میں نے اس موضوع پر بھی کالم لکھے جنہیں عوام میں بہت زیادہ پذیرائی ملی۔ کافی عرصے سے یہ میری عادت سی بن گئی ہے کہ میں باقاعدگی سے قلم کی طاقت استعمال کرتے ہوئے مختلف قومی و عالمی ایشوز اور عوامی مسائل کے حل کیلئے تجاویز پیش کرتا ہوں۔ سرکاری ایئرلائن پی آئی اے کی نجکاری کے خلاف میں نے آواز بلند کی کہ پی آئی اے ہمارا قومی اثاثہ ہے۔ یہ ایک فطری امر ہے کہ کسی بھی املاک کی حفاظت وہی کرسکتا ہے جسکو اس سے دِلی لگاؤ ہو یا جذباتی وابستگی ہو۔ تقسیمِ ہند کے بعد لیاقت نہرو سمجھوتے کے تحت انڈیا میں مسلمانوں کی املاک کی دیکھ بھال ایک مسلمان وزیر کرتا آرہا ہے، یہاں تک کہ اسرائیل میں بھی متروکہ وقف املاک کی ذمہ داری مسلمان کو سونپی جاتی ہے، پاکستان میں بیشتر اوقاف کی املاک ہندوؤں کی ہے، میں نے چیئرمین کیلئے سابق چیف جسٹس رانا بھگوان داس کا نام تجویز کیا تھا،اصولی طور پر پارٹی قیادت متفق بھی ہوئی لیکن اچانک سیاسی بھرتی کرتے ہوئے صدیق الفاروق کو چیئرمین لگا دیا گیا،ہماری املاک کو پھر جس بے دردی سے کوڑیوں کے مول بیچا گیا، کٹاس راج مندر کے ایشو پر جو جگ ہنسائی ہوئی، یہ سب میڈیا کی زینت بنتا رہا ہے۔ مجھے خوشی ہے کہ سپریم کورٹ نے صدیق الفاروق کو ہٹاتے وقت میرے موقف سے اتفاق کیا کہ متروکہ وقف املاک بورڈ کا سربراہ غیرمسلم پاکستانی شہری ہونا چاہیے۔اسی طرح آج (ن)لیگ ایک طرف” ووٹ کو عزت دو “کی بات کرتی ہے تو دوسری طرف ووٹ سے منتخب ہونے والے چیئرمین سینیٹ اور بلوچستان میں ان ہاؤس جمہوری تبدیلی کوکیوں نہیں تسلیم کرتی؟ کمزور پاکستانیوں بالخصوص محب وطن اقلیتوں کیلئے اعلیٰ عدلیہ امید کی کرن ہے ، میں کیسے برداشت کر سکتا ہوں کہ عدلیہ کو اپنے مذموم مقاصد کیلئے نشانہ بنایا جائے۔ایسے حالات میں جب مجھے پاکستان تحریک انصاف کی اعلیٰ قیادت کی طرف سے شمولیت کیلئے پیغام ملا تو میں نے اسے قدرت کا اشارہ جانا، میں نے عمران خان ، شاہ محمود قریشی، جہانگیر ترین اور دیگر کو اپنی رہائش گاہ پر خوش آمدید کہا، ہمارا اتفاق ہوا کہ عدلیہ کے احترام اور قومی اداروں کے استحکام کیلئے تحریک انصاف کے پلیٹ فارم سے جدوجہد میں تیزی لائی جائے گی، میں نے یہ بھی کہا کہ سیاسی بھرتیوں کا مکمل خاتمہ ہونا چاہیے، غیرمسلموں کے 35لاکھ ووٹ حاصل کرنے کیلئے ضروری ہے کہ پارلیمان میں غیر مسلموں کی مخصوص نشستوں کو ختم کرکے دُہرے ووٹ کے ذریعے حقیقی نمائندے ڈائریکٹ منتخب کرنے کا طریقہ کار متعارف کرایاجائے۔ میں سمجھتا ہوں کہ تحریک انصاف میں غیرمسلموں کی نمائندگی ہونے سے اب پارٹی مکمل ہوگئی ہے،جیسے آل انڈیا مسلم لیگ کو جوگندرناتھ منڈل نے تقویت پہنچائی، آج تحریک انصاف کو اپنا پیغام عام کرنے کیلئے ڈاکٹر رمیش کمار کا ساتھ حاصل ہوگیا ہے، میرا آئندہ ماہ ایک بڑا جلسہ کراچی میں منعقد کرانے کا ارادہ ہے، آئندہ الیکشن میں 35لاکھ غیرمسلم ووٹرز کو بلے پر ٹھپہ لگانے کیلئے قائل کرنے کیلئے ملک گیر دوروں کا بھی اعلان کروں گا۔ آج میں اپنے چاہنے والوں کو یہ یقین دہانی بھی کراتا ہوں کہ ڈاکٹر رمیش کمار نے پارٹی ضرور چینج کی ہے لیکن عوام کی خدمت کا عزم نہیں،آپ مجھے تحریک انصاف کے پلیٹ فارم پرپہلے سے زیادہ جوش و جذبے سے عوام کی خدمت اور حصول انصاف کی جدوجہد کرتا پائیں گے۔

***

Load More Related Articles
Load More By PHC
Load More In Uncategorized
Comments are closed.

Check Also

The first 100 days by Dr Ramesh Kumar Vankwani

All eyes are on Pakistan as PTI Chairman Imran Khan will be elected as the prime minister …