ہندو مندروں کو سرکاری سیکیورٹی فراہم کی جائے، پاکستان ہندوکونسل کا مطالبہ

439

کراچی /اسلام آباد (22نومبر2014): پاکستان ہندو کونسل کے سرپرست اعلیٰ اور ممبر قومی اسمبلی ڈاکٹر رمیش کمار ونکوانی نے ٹنڈو محمد خان میں ہنومان مندر نظرآتش کیے جانے پر سخت غم و غصے کا اظہار کرتے ہوئے حکومتِ پاکستان سے ملک بھر میں مذہبی مقامات بالخصوص اقلیتی عبادت گاہوں کو سرکاری سطع پر سیکیورٹی فراہم کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔ڈاکٹر رمیش نے اپنے بیان میں سندھ کے شہر حیدرآباد سے چالیس کلومیٹر کے فاصلے پر واقعے ٹنڈومحمد خان شہر میں واقع ہندو مندر کو نظرآتش کیے جانے کی وجہ سے دومقدس مورتیاں اور مذہبی کتابیں گیتا اور رامائن جلائے جانے پر افسوس کرتے ہوئے کہا کہ اگر سپریم کورٹ کے تحفظِ حقوق اقلیتوں کے حوالے سے جاری کردہ احکامات پر عملدرآمد پر کیا جائے تو ایسے افسوسناک واقعات سے بچاجاسکتا ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ جب ملک بھر کے مقدس مقامات ومذہبی تقریبات کو سرکاری سطع پر تحفظ حاصل ہے تو نہتے مظلوم ہندوؤں کو کیونکر شرپسندوں کے رحم و کرم پر چھوڑ دیا گیا ہے، پاکستان ہندوکونسل کے مطابق ملک بھر میں لگ بھگ چودہ سو مندروں کو فوری طور پر سیکورٹی مہیا کیے جانے کی اشد ضرورت ہے۔

Load More Related Articles
Load More By PHC
Load More In اردو - URDU
Comments are closed.

Check Also

The News International (October 12, 2018)