گیارہ اگست:اقلیتوں کا قومی دن تحریر: ڈاکٹر رمیش کمار وانکوانی

85

گیارہ اگست:اقلیتوں کا قومی دن
تحریر: ڈاکٹر رمیش کمار وانکوانی، ممبر قومی اسمبلی

پاکستان بھر میں ہر سال گیارہ اگست کو غیر مسلم اقلیتی برادری کے قومی دن کے طور پر منایا جاتا ہے ، گیارہ اگست کو اقلیتوں کا قومی دن قرار دینے کا مقصد درحقیقت قیامِ پاکستان سے چند روز قبل گیارہ اگست 1947 ؁ء کو آئین ساز اسمبلی سے کی جانے والی بانیِ پاکستان قائد اعظم محمد علی جناح کی اس تقریر کے پیغام کو اجاگر کرنا ہے جس میں انہوں نے نوزائیدہ مملکت پاکستان میں بسنے والوں کو مکمل آزادی فراہم کرنے کی یقین دہانی کراتے ہوئے کہا تھا کہ پاکستان میں تمام شہریوں کو یکساں حقوق میسر ہوں گے اور ریاست کو ان کے مذہب سے کوئی سروکار نہیں ہو گا۔اگر ہم قائد اعظم کی گیارہ اگست کی تقریر کا بغور مطالعہ کریں تو یہ بات واضح ہو جاتی ہے کہ سرزمین پاکستان میں مختلف مذاہب سے تعلق رکھنے والے بستے ہیں اور وہ تمام شہری پاکستانی ہیں ،میں نے متعدد مواقع پر نشاندہی کی ہے کہ آئینِ پاکستان کے تناظر میں لفظ اقلیت کی بجائے غیر مسلم کا لفظ استعمال کیا جانا چاہیے کیونکہ اقلیت لفظ بذاتِ خود ایک تنگ نظری پر مبنی مائینڈ سیٹ کو ظاہر کرتاہے، ایک اور بڑی غلط فہمی قومی پرچم کے حوالے سے پائی جاتی ہے کہ سبز رنگ مسلمانوں اور سفید رنگ غیرمسلموں کی عکاسی کرتا ہے، درحقیقت ہمارے قومی پرچم میں سبز رنگ پاکستان کی سرسبزیت ہریالی خوشحالی جبکہ سفید رنگ ملک میں بسنے والے تمام باشندوں کیلئے امن و سلامتی کی علامت ہے۔ قیامِ پاکستان کے وقت ملک کی تقریبا ایک چوتھائی آبادی (لگ بھگ 23فیصد) غیرمسلموں پر مشتمل تھی جو آج سرکاری اعداد و شمار کے مطابق بتدریج کم ہوتے ہوئے 3فیصد تک رہ گئی ہے لیکن پاکستان ہندوکونسل سمیت دیگر غیرسرکاری اداروں کی رپورٹس کے مطابق غیرمسلموں کی موجودہ آبادی پانچ سے چھ فیصد پرمشتمل ہے،الیکشن کمیشن کی تازہ رپورٹ کے مطابق ملک بھر میں بسنے والے غیرمسلم اقلیتی ووٹرزمیں ہندوؤں کی تعدادسب سے زیادہ پچاس فیصدپر مشتمل ہے، سرکاری اعداد و شمار میں غیرمسلم آباد ی کو کم ظاہر کرنے کا مقصد مختص کردہ کوٹے میں کمی لاکراستحصال کرناہی ہو سکتا ہے۔ اس امر میں کوئی دو رائے نہیں ہے کہ تحریکِ پاکستان کے پس منظر میں جو بنیادی سوچ کارفرما تھی وہ برطانوی جمہوری نظام کے تحت مسلمانوں کو اکثریت کے استحصال سے محفوظ رکھنا تھا لیکن یہ بھی ایک ناقابلِ فراموش حقیقت ہے کہ بانیِ پاکستان اور انکے عظیم ساتھیوں کا مقصد پاک سرزمین میں بسنے والی غیرمسلم اقلیت کے حقوق غصب کرتے ہوئے انہیں احساس عدم تحفظ کا شکار کرنا قطعی نہ تھا۔ قیامِ پاکستان کے فوراََ بعد قائداعظم نے اپنی کابینہ میں غیرمسلم وزراء سرظفراللہ خان اور جوگندرناتھ منڈل کو شامل کرکے یہ پیغام دیا کہ ملکی ترقی کو یقینی بنانے کیلئے حکومت پاکستان کی نظر میں تمام شہری بلا تفریق رنگ و نسل ، مذہب و عقیدہ مسلم اور غیر مسلم سب برابر ہیں،نہ کوئی اکثریت ہے اورنہ کوئی اقلّیت۔ بہت سے لوگوں کیلئے یہ حیران کن انکشاف ہوگا کہ قائداعظم کی فرمائش پر پاکستان کا پہلاقومی ترانہ ایک ہندو نے تحریر کیا تھا، میانوالی سے تعلق رکھنے والے ہندو شاعر جگن ناتھ آزاد کا تحریرکردہ ترانہ 14اگست 1947 ؁ء کو ریڈیوپاکستان سے نشر ہوا اورسرکاری سطح پر بطورقومی ترانہ پہلے ڈیڑھ سال استعمال ہوا لیکن قائداعظم کی وفات کے بعد ترک کردیا گیا۔گیارہ اگست ہی کے دن قائداعظم کی غیرمسلموں سے ہجرت نہ کرنے کی اپیل کے جواب میں لاتعداد ہندو گھرانوں نے پاکستان کواپنی دھرتی ماتا کا درجہ دے دیا،آج بھی ایک سچے اور محب وطن پاکستانی ہندو کیلئے اپنے وطن پاکستان کی سربلندی کیلئے سردھڑ کی بازی لگانا ایمان کا حصہ ہے۔ قائد اعظم کی کابینہ سے لے کر دورِ حاضر کے سیاسی میدان تک، تعلیم و صحت سے لے کر دفاع وطن تک، نظامِ عدل سے لیکر سائنس اور آرٹس تک ہر شعبے میں غیر مسلم پاکستانی شہریوں نے اپنی صلاحیتوں کا لوہا منوایا ہے لیکن اسے ہماری تنگ نظری کا نام دیا جائے یاملک دشمن عناصر کی سازش کہ وطن عزیز میں ایک منظم انداز میں غیرمسلم شہریوں کے قومی ترقی میں پرخلوص کردار کو یکسر نظرانداز کرتے ہوئے مذہبی تعصب کا نشانہ بنایا جارہا ہے، آج بدقسمتی سے نہ تو قائداعظم کی گیارہ اگست کی مکمل تقریر ریڈیو پاکستان کے آرکائیو میں موجود ہے اورنہ ہی آزادی کے موقع پر نشرکردہ قومی ترانہ ،پاکستان کے بیشترتعلیمی اداروں کی درسی کتب میں غیرمسلم اقلیتی برادری کو منفی شخصیت کے طور پر پیش کرکے معصوم ذہنوں کو پراگندہ کیا جارہا ہے، معاشرے کے چند شدت پسند عناصر اپنے مذموم مقاصد کی تکمیل کیلئے ایک ایسے پاکستان کی تشکیل چاہتے ہیں جہاں غیرمسلم اقلیت خوف و ہراس کے سائے میں زندگی بسر کریں اور اس سلسلے میں مندروں گرجا گھروں پر حملے، ہندو نابالغ بچیوں کا اغواء اور جبری شادی، غیرمسلم کاروباری شخصیات کا اغواء برائے تاوان، بلاسفیمی قوانین کا غلط استعمال اور نصابِ تعلیم میں نفرت انگیز مواد جیسے قابلِ مذمت ہتھکنڈے آزمائے جارہے ہیں، افسوس کی بات ہے کہ ڈکٹیٹر جنرل ضیاء الحق نے اپنے دورِ اقتدار کو طول دینے کیلئے پاکستانی معاشرے میں شدت پسندی کا زہر گھولنے میں بنیادی کردار ادا کیا ۔ اگر قائد اعظم کے نظریہ پاکستان کی بات کی جائے تو ملک میں دو مکاتب فکر اپنا اپنا مفہوم بیان کرتے نظر آتے ہیں، ایک کا کہنا ہے کہ قائد اعظم پاکستان کو اسلامی مذہبی ریاست بنانا چاہتے تھے تودوسرے کے مطابق پاکستان کے بانی محمد علی جناح لبرل سوچ کے مالک تھے اور پاکستان کو جدید سیکولر ریاست بنانا چاہتے تھے۔ بالفرض دونوں قابلِ احترام طبقات کی رائے کو انفرادی حیثیت میں مان بھی لیاجائے تو یہ بات بالکل واضح ہے کہ انسانی تاریخ کی پہلی اور کامیاب اسلامی ریاست پیغمبر اسلام ﷺ نے مدینہ منورہ میں قائم فرمائی تھی جہاں میثاقِ مدینہ کے تحت غیرمسلم شہریوں کے ساتھ پرامن بقائے باہمی کے معاہدے کرتے ہوئے یکساں مذہبی، سیاسی اور ثقافتی آزادی فراہم کی گئی،اسی طرح دنیا کے تمام مہذب سیکولر ممالک اپنی اقلیتی برادری کو مکمل حقوق فراہم کرتے ہوئے اپنے معاشرے کی بنیادیں عدل و انصاف ، باہمی اخوت اور بھائی چارے پر استوار کرنے کی کوشش کرتے ہیں۔یہی وجہ ہے کہ میں سمجھتا ہوں کہ مذہبی پاکستان یا سیکولر پاکستان کی بحث سے قطع نظرقومی ترقی کیلئے ضروری ہے کہ غیرمسلم اقلیتوں کے حقوق کا تحفظ کرتے ہوئے انکی سماجی خدمات کا قومی سطع پر اعتراف بھی کیا جائے۔اگرچہ آئین پاکستان کے تحت تمام شہری قانون کی نظر میں برابر ہیں اور قانونی تحفظ کے مساوی طور پر حقدار ہیں لیکن متعدد مرتبہ نہتے غیرمسلموں کو نفرتوں کا نشانہ بنایا جاچکا ہے، یہاں یہ امر بھی قابلِ توجہ ہے کہ ہمارے درمیان ہی کچھ ناعاقبت اندیش عناصرملک و قوم کی عالمی سطع پر بدنامی کا باعث بن رہے ہیں جسکے مضمر اثرات پوری قوم کو بھگتنے پڑجاتے ہیں۔ گیارہ اگست کادن حکومتِ پاکستان سے تقاضا کرتا ہے کہ وہ ایسی قابلِ عمل پالیسیاں نافذ کرے جس سے اقلیتوں میں احساس تحفظ اجاگر ہوسکے، اس حوالے سے امورِ مملکت میں غیرمسلموں کی بھرپورشمولیت ، غیرمسلم شہریوں کی قومی خدمات کے اعتراف میں حکومتی ایوارڈز کا اجراء اور اہم سرکاری اداروں کی سربراہی اقلیتی برادری کے اہل افراد کو سونپے جانے سے قومی اور مذہبی ہم آہنگی کو فروغ دیا جاسکتا ہے، غیرمسلم پاکستانی شہریوں کو اپنے حقیقی نمائندگان پارلیمان میں بھیجنے کیلئے آزاد کشمیر اسمبلی کی طرز پر دہرے ووٹ کا حق دیے جانے سے جمہوری نظام مضبوط ہوگا، میں سمجھتا ہوں کہ قائداعظم کی گیارہ اگست کی مکمل تقریر کو نصاب تعلیم کا حصہ بناتے ہوئے اقلیتوں کے قومی دن کے موقع پر ملک بھر میں ایسی تقریبات منعقد کروانی چاہیے جس میں اقلیتی اور اکثریتی شہری ایک دوسرے کے ہاتھوں میں ہاتھ ڈالے قومی یکجہتی کا مظاہرہ پیش کریں۔ انفرادی سطع پر ہر پاکستانی شہری کو اس عزم کا اعادہ کرنا چاہیے کہ وہ اپنے ہم وطنوں کے خلاف بلاجواز تعصبانہ رویے سے گریز کرتے ہوئے معاشرے میں برداشت، رواداری اور بھائی چارے کی فضاء کوبرقرار رکھے گا۔

*******

Load More Related Articles
Load More By PHC
Load More In Press Releases

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Check Also

Disaster reduction by Dr Ramesh Kumar Vankwani

Every year on October 13, the world observes the International Day for Natural Disaster Re…